’میری طبیعت اچانک خراب ہوجاتی تھی، پھر ایک عامل نے مجھے بتایا کہ جن کا سایہ ہے لیکن بالآخر ڈاکٹر کو دکھایا تو دراصل مجھے یہ بیماری تھی کہ۔۔۔‘ خاتون نے ایسی بات کہہ دی جو ہر شخص کو معلوم ہونی چاہیے
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
psychiatric disease ghost treatment

بدقسمتی کی بات ہے کہ آج کے جدید دور میں بھی نفسیاتی بیماریوں میں مبتلاءافراد کو آسیب زدہ قرار دے کر جعلی عامل اور شعبدہ باز فراڈئیے نہ صرف سادہ لوح لوگوں کو لوٹ رہے ہیں بلکہ بعض اوقا ت ان کے ساتھ سنگین جرائم بھی کر گزرتے ہیں۔

یہ صورتحال صرف غریب اور پسماندہ ممالک میں ہی نہیں ہے بلکہ کسی حد تک ترقی یافتہ ممالک میں بھی معاملہ ایسا ہی ہے۔ کینیڈا سے تعلق رکھنے والی نوجوان خاتون میری میک لالن کو بھی ایک دھوکہ باز عامل نے آسیب زدہ قرار دے دیا لیکن بعد میں حقیقت کھلی کہ وہ ایک نفسیاتی عارضے کا شکار تھیں۔ میری نے بتایا کہ وہ ذہنی پریشانی اور ڈپریشن کا شکار تھیں لیکن عامل نے بتایا کہ ان پر جن کا سایہ ہے اور اس نے جن نکالنے کیلئے عملیات بھی کئے، جس کے نتیجے میں ان کا نفسیاتی عارضہ اور شدید ہوگیا۔ میری نے اپنے ساتھ پیش آنے والے افسوسناک واقعات کو یاد کرتے ہوئے بتایا ”وہ مجھے ایک چرچ میں لے گئے جہاں پادری اور اس کے آس پاس موجود لوگ کچھ پڑھ کر میرے اوپر پھونک رہے تھے۔ وہ جو کچھ بھی کہہ رہے تھے وہ انگریزی زبان میں نہیں تھا۔ مجھے اس کی کچھ سمجھ نہیں آرہی تھی۔ وہ چلا چلا کر مجھے کہہ رہے تھے میں اپنے گناہوں کو مان لوں اور ساتھ ہی بدروحوں کو بھی میرے جسم سے نکل جانے کا حکم دے رہے تھے۔ میں اس ساری صورتحال سے بے حد خوفزدہ تھی۔ ظاہر ہے کہ ان عملیات سے میرا نفسیاتی مسئلہ تو حل نہیں ہوا البتہ میرے ذہن میں ایک خوف ضرور بیٹھ گیا۔ جب ڈاکٹر نے مجھے بتایا کہ میں ذہنی دباﺅ کی وجہ سے نفسیاتی بیماری کی شکار تھی تو مجھے اطمینان تو ضرور محسوس ہوا لیکن اپنے ساتھ ہونے والے سلوک پر بہت رونا بھی آیا۔“ واضح رہے کہ برطانیہ میں حال ہی میں شائع ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق آج کے دور میں جادو ٹونے کے عملیات کی مانگ میں کمی کی بجائے اضافہ ہورہا ہے۔ جریدے تھیوس میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق جنات اور بدروحوں کے علاج کیلئے جادو ٹونے اور مذہبی عملیات برطانیہ میں اب ایک بڑی انڈسٹری بن چکی ہے جو تیزی سے پھل پھول رہی ہے۔ تحقیق کار بین ریان کا کہنا تھا ”پادری اور خود کو مذہبی شخصیات قرار دینے والے دیگر افراد بڑے پیمانے پر عملیات کی خدمات پیش کررہے ہیں۔ اس کی ایک بڑی وجہ تارکین وطن کی برطانیہ آمد ہے جو جادو ٹونے اور عملیات پر نسبتاً زیادہ یقین رکھتے ہیں۔ اس بڑھتے ہوئے رجحان کا سب سے تشویشناک پہلو یہ ہے کہ عموماً نفسیاتی و ذہنی مسائل سے دوچار افراد کو بھی آسیب زدہ اور بدروح گرفتہ قرار دے کر ان پر عملیات کئے جاتے ہیں جس کے نتیجے میں ان کا مسئلہ سنگین ہوجاتا ہے۔“

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں