غیر عرب تارکین کے نکاح نامے مترجم کے بغیر ناقابل قبول ہونگے: سعودی وزارت انصاف
nikkah signs saudi arabia

سعودی وزارت  انصاف نے واضح کیا ہے کہ غیر عرب تارکین کے نکاح نامے مترجم کے بغیر ناقابل قبول ہونگے

  وزارت  انصاف کے ماتحت  نکاح  نامے منعقد کرنے والے  عہدیداروں پر پابندی عائد کی گئی ہے کہ اگر وہ کسی  ایسے غیر ملکی جوڑے کا نکاح پڑھا رہے ہوں جو عربی زبان سے ناواقف ہوں تو ایسی حالت میں اس زبان کے مترجم کی خدمات حاصل کرنا ضروری ہوگا۔ مترجم کی مدد ہی سے  ایجاب و قبول  کا   تیقن حاصل ہوسکے گا۔ ریکارڈ پر  مترجم کا نام ، اس کے شناختی کارڈ  کی تفصیلات اور دستخط کا تذکرہ بھی ضروری ہوگا۔  نکاح نامہ  وصول کرنے پر  عائلی امور  کا ادارہ اس کی تصدیق کرے گا۔  اس کے بعد  متعلقہ ملک کے  متعلقہ ادارے  اس کی توثیق کریں گے۔  باخبر ذرائع نے الوطن اخبار کوبتایا کہ  1436-37ھ کے دوران  سعودی عرب میں  3686 غیر ملکیوں نے نکاح کئے ۔ یہ  مملکت میں  ہونے والے نکاح کا 8 فیصد ہیں۔ سب سے زیادہ شادیاں  یمن ، شام اور مصر کے شہریوں نے کیں۔  وزارت انصاف نے  انتباہ دیا ہے کہ  اگر  نکاح خواں نے  خوشخط  شکل میں  نکاح کی تفصیلات درج نہ کیں یا  الفاظ میں ابہام  رکھا  یا لکھنے کے بعد  کچھ کانٹ چھانٹ کی یا ترمیم کیلئے  لیکوڈ استعمال کیا ، اس پر نکاح خواں کا احتساب ہوگا۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں