آرٹیکل 62، 63 کا اطلاق ارکان پارلیمنٹ پرہوتا ہے،نااہلی کیس میں زلفی بخاری کا جواب
zulfi bukhari article supreme court

وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانی زلفی بخاری نے نااہلی کیس میں سپریم کورٹ میں جواب جمع کروا دیا، جس میں نااہلی کی درخواست خارج کرنے کی استدعا کی گئی ہے۔

زلفی بخاری کی جانب سے جمع کروائے گئے جواب میں کہا گیا ہے کہ وہ رکن پارلیمنٹ نہیں ہیں جبکہ آرٹیکل 62 اور 63 کا اطلاق صرف ارکان پارلیمنٹ پر ہوتا ہے۔وزیراعظم کے معاون خصوصی نے اپنے جواب میں سپریم کورٹ میں نااہلی کےلئے دائر درخواست خارج کرنے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ وہ برطانیہ میں پیدا ہوئے، بعد میں شہریت حاصل نہیں کی۔زلفی بخاری کا کہنا تھا کہ وہ اوورسیز پاکستانیوں کے مسائل حل کرنے میں وزیراعظم کی معاونت کررہے ہیں۔ساتھ ہی انہوں نے سوال اٹھایا کہ جب عالمی اداروں سے معاونت لی جا سکتی ہے تو دہری شہریت والے سے کیوں نہیں؟ جبکہ سمندر پار پاکستانیوں کو ووٹ کا حق عدالت نے دیا ہے۔ زلفی بخاری کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم کو معاون خصوصی تعینات کرنے کا مکمل حق ہے۔واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے اپنے قریبی دوست زلفی بخاری کو 18 ستمبر کو اپنا معاون خصوصی برائے سمندر پار پاکستانی مقرر کرتے ہوئے انہیں وزیر مملکت کا درجہ دیا تھا۔تاہم درخواست گزار عادل چھٹہ نے زلفی بخاری کی بطور معاون خصوصی تقرری کو سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا تھا۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں