اسلام آباد: دھرنا کے شرکا اور پولیس میں تصادم، 3اہلکار زخمی
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
police islamabad injured

مذہبی جماعت کے دھرنے کے دوران شرکاء اور پولیس میں تصادم ہوا جس کے نتیجے میں ایس ایچ او سمیت 3 پولیس اہلکار زخمی ہوگئے،جبکہ وفاقی وزیر مذہبی امور نے دھرنا ختم کرنے کی اپیل کی ہے ۔تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں ختم نبوت سے متعلق شقوں میں ترمیم کیخلاف مذہبی و سیاسی جماعتوں کا دھرنا جاری ہے۔

گزشتہ روزپولیس اور شرکا کے درمیان تصادم ہوا جس میں ایس ایچ او آئی نائن سمیت دو پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔ آئی جی پولیس نے کہا دھرنے کے شرکا جان بوجھ کر محاذ آرائی کا ماحول پیدا کررہے ہیں ا و ر چاہتے ہیں پولیس کیساتھ تصادم ہو۔دوسری جانب دھرنے میں شریک مظاہرین کا کہنا ہے اگر پولیس ہمارے خلاف آپریشن کرے گی تو ہم بھی اپنا دفاع کریں گے۔ مظاہرے میں شریک قائدین نے شرکا کو مزاحمت کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اپنے دفاع میں پولیس کیخلا ف کارروائی کی جائے۔ادھر وفاقی وزیر مذہبی امور سردار یوسف نے کہا ہے تمام مسلمانوں کا ختم نبوت پرپختہ یقین ہے، حلف نامے میں ہونیوالی غلطی کا فوری نوٹس لے کراسے دور کیا گیا، کسی کو کوئی شک و شبہ ہے تو آئے اور ہم سے بات کرے۔اسلام آباد میں ن لیگی رہنما طلال چوہدری کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب میں انکا مزید کہنا تھا دھرنے سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے اور معمولات زندگی متاثر ہورہی ہیں۔انہوں نے اس موقع پر دھرنا ختم کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا نظم ونسق کو چلنے دیں اور معمولات زندگی کو بحال ہونے دیا جائے۔یاد رہے اسلام آباد میں دھرنے کے باعث فیض آباد فلائی اوور کے علاوہ راولپنڈی، اسلام آباد، مری، ہری پور، ایبٹ آباد، مانسہرہ سمیت خیبر پختونخوا کوملانے والی کئی شاہراہیں تقریباً ایک ہفتے سے بند پڑی ہیں۔دھرنے کے باعث جڑواں شہروں میں چلنے والی میٹرو بس سروس بھی معطل ہے ۔مظاہرین کیخلاف اقدام قتل، کار سرکار میں مداخلت اور نفرت انگیز تقاریر کے الزامات کے تحت 9 مقدمات درج کیے جا چکے ہیں، جبکہ دھرنے میں شریک افراد کا مطالبہ ہے کہ حکومت ختمِ نبوت سے متعلق حلف نامے میں کی گئی تبدیلی کے ذمہ داروں کا تعین کر کے ان کیخلاف کارروائی کرے۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں