وزیراعظم کی زیر صدارت اعلیٰ سطحی اجلاس، پٹھان کوٹ حملہ کے بعد پاکستان میں
pathankot meeting prime minister

وزیراعظم کی زیر صدارت اعلیٰ سطحی اجلاس، پٹھان کوٹ حملہ کے بعد پاکستان میں جیش محمد کے کئی کارکن گرفتار، ماہرین کی ٹیم جائے وقوعہ پر بھیجنے کا فیصلہ، شرکاءکا دہشت گردی ختم کرنے کے عزم کا اعادہ

 پٹھان کوٹ ائیربیس حملے کی تحقیقات میں پاکستان نے بھارت کی جانب سے ملنے والی معلومات کی روشنی میں اہم پیش رفت کرتے ہوئے جیش محمد کے کئی ارکان گرفتار کر لئے اور کالعدم تنظیم کے دفاتر کو سیل کرنے کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ 
تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نواز شریف کی زیر صدارت اعلیٰ سطحی اجلاس ہوا جس میں آرمی چیف جنرل راحیل شریف، ڈی جی آئی ایس آئی، ڈی جی آئی بی، ڈی جی ایم او، ڈی جی رینجرز پنجاب، مشیر قومی سلامتی، وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار، وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار، مشیر خارجہ سرتاج عزیز، وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف اور طارق فاطمی سمیت دیگر اعلیٰ شخصیات شریک ہوئے۔ اجلاس میں ملکی و خطے کی سلامتی کی صورتحال اور پٹھان کوٹ واقعے کی تحقیقات کے معاملے پر غور کیا گیا جبکہ افغانستان، پاکستان، چین اور امریکہ کے درمیان چار فریقی مذاکرات کے معاملے پر بھی گفتگو ہوئی۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن ضرب عضب اور نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کے امور کا بھی جائزہ لیا گیا۔ اجلاس کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ پٹھان کوٹ حملے سے متعلق بھارت کی جانب سے ملنے والی معلومات کی روشنی میں کالعدم تنظیم جیش محمد کے کئی کارکن گرفتار کئے ہیں۔ 
اجلاس کے بعد جاری ہونے والے اعلامئے کے مطابق پٹھان کوٹ واقعے سے متعلق دہشت گردوں کی گرفتاریوں میں پیش رفت ہوئی ہے اورکالعدم تنظیم جیش محمد کے کئی ارکان کو گرفتار کیا گیا جبکہ کالعدم تنظیم کے دفاتر بھی سیل کئے جارہے ہیں۔ اجلاس کے شرکاءنے پاکستانی ماہرین کی ٹیم کو پٹھان کوٹ جائے وقوعہ پر بھیجنے کا فیصلہ کیا جو شواہد اکٹھے کرے گی جس کے بعد تحقیقات میں مزید پیش رفت کی جائے گی۔اجلاس کے شرکاءنے اس عزم کا اعادہ کیا کہ پاکستان اپنی سرزمین کو دہشت گردی کیلئے استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے گا اور دہشت گردی کے خاتمے کے فیصلے پر عملدرآمد جاری رکھا جائے گا۔ اجلاس میں دہشت گردی کے خاتمے کے حوالے سے اقدامات پر اطمینان کا اظہارکیا گیا ۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں