سپریم کورٹ کا راحیل شریف کی تقرری کا معاملہ وفاقی کابینہ کے سامنے اٹھانے کا حکم
notice raheel sharif supreme court

سپریم کورٹ نے سابق سربراہ افواج پاکستان جنرل ریٹائرڈ راحیل شریف کی تقرری کا معاملہ وفاقی کابینہ کے سامنے رکھنے کی ہدایت کردی۔

سپریم کورٹ میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں دوہری شہریت ازخود نوٹس کیس کی سماعت ہوئی، اس موقع پر چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ جنرل ریٹائرڈ راحیل شریف کے کیس میں وفاقی حکومت سے منظوری نہیں لی گئی،ایڈیشنل سیکرٹری دفاع نے عدالت کو بتایا کہ حکومت پاکستان نے سعودی حکومت سے رابطہ کیا تھا، جی ایچ کیو نے بھی حکومت کو این او سی بھیجا، چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ کیا قانون جی ایچ کیو اور وزارت دفاع کو این او سی کا اختیار دیتا ہے، وفاقی حکومت کی اجازت تحریری طور پر دکھا دیں، سوال یہ ہے کہ کیا وفاقی حکومت نے جنرل (ر) راحیل شریف کو اجازت دی تھی۔اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ عدالتی فیصلے کے مطابق کابینہ کی منظوری نہیں لی گئی، چیف جسٹس نے کہا کہ اب اس کیس کو کابینہ وفاقی حکومت کے سامنے رکھے اور وفاقی حکومت اس پر فیصلہ کرے جب کہ جنرل شجاع پاشا کا کہنا ہے کہ میں نے کہیں نوکری نہیں کی۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں