وہ وقت جب سینئر صحافی سے شہبازشریف نے نوازشریف کی شکایت لگائی،بات بھی ایسی کہ آپ بھی سوچنے پر مجبور ہو جائیں گے
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
news prime minister

زیراعظم میاں نواز شریف اور ان کے بھائی میاں شہباز شریف کے درمیان اختلافات کی خبریں تو آرہی ہیں اور ایسے میں سینئیر صحافی ہارون الرشید نے اس مسئلے پر کالم لکھ کر دنیا کو حیران کردیا ہے۔

اپنے حالیہ کالم میں وہ لکھتے ہیں کہ ’انہی دنوں مجید نظامی مرحوم سعودی عرب تشریف لے گئے اور میاں محمد نواز شریف سے انہوں نے تبادلہ خیال کیا۔ نہایت رنج کے ساتھ نظامی صاحب کہا کرتے تھے۔ میاں صاحب نے مجھ سے کہا: میں جیل نہیں کاٹ سکتا۔ شہباز شریف کا حال بھی کچھ زیادہ مختلف نہ تھا۔ 1993ءمیں غلام اسحق خان نے ان کی حکومت برطرف کی تو نئے انتخاب کے نتیجے میں برادر خورد پنجاب اسمبلی میں قائدِ حزب اختلاف ہو گئے۔ گرفتاری کے خوف سے وہ بیرون ملک تشریف لے گئے۔ بہانہ یہ کیا وہ کمر کی تکلیف میں مبتلا ہیں۔ چوہدری پرویز الٰہی ان کی جگہ اپوزیشن لیڈر بنے۔ جیل بھی ایک شان سے کاٹی اور اپوزیشن لیڈر کا کردار بھی حوصلہ مندی کے ساتھ ادا کیا۔جیسا کہ ذکر کیا کہ سرور پیلس میں قیام کے دوران مجید نظامی، شریف خاندان سے ملنے گئے، جن کے وہ ہمدم و ہم نفس تھے اور سرپرست بھی۔ کہا جاتا ہے کہ شہباز شریف نے ان سے شکایت کی: خود تو محل میں براجمان ہیں، میرے اور میرے بچوں کے لئے انیکسی ہے۔ نظامی مرحوم کے قریبی ساتھیوں کے بیان کردہ واقعات میںممکن ہے کچھ مبالغہ بھی ہو۔پانامہ لیکس کے منظرِعام پر آنے کے بعد شہباز شریف کے خاندان نے جو طرزِ عمل اختیار کیا، اس سے یہ بہرحال آشکار ہو گیا کہ ایک دوسرے کے بارے میں ان کے حقیقی احساسات کیا ہیں۔ ایک بزرگ کا قول یاد آتا ہے: اگر تم ایک دوسرے کے دلوں میں جھانک سکو تو ایک دوسرے کے جنازے اٹھانے سے انکار کر دو۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں