جج کسی وکیل کی تعریف کرے سمجھ لیں, فیصلہ اس کیخلاف آرہاہے،چیف جسٹس کے ریمارکس پرکمرہ عدالت زعفران زار
justic saqib nisar supreme court

عدالت عظمیٰ میں شاہ زیب قتل کیس کے مرکزی ملزم شاہ رخ جتوئی اورمرتضٰی لاشاری کی سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلہ کے خلاف دائر کی گئی نظر ثانی کی درخواستوں کی سماعت کے دوران اس وقت کمرہ عدالت زعفران زار بن گیا۔

 جب فاضل چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ملزم شاہ رخ جتوئی کے وکیل لطیف کھوسہ کومخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے خاندان میں بڑے برائٹ لوگ ہیں توانہوں نے پیشن گوئی کی کہ جب جج کسی وکیل کی تعریف کرے تو سمجھ لیں کہ فیصلہ اس کے خلاف آرہا ہے،اس کے چند لمحوں بعد واقعی عدالت نے ان کی نظرثانی کی درخواستیں خارج کردیں.دوران سماعت ایک موقع پر لطیف کھوسہ نے فاضل ججوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایم سوری میں آپ کی سمع خراشی کررہا ہوں،جس پرفاضل چیف جسٹس میاں ثاقب نثارنے کہا کہ آپ سمع خراشی کرلیں ،آپ نے ملزم سے بڑی تگڑی فیس جو لے رکھی ہے ،جس پر کمرہ عدالت قہقہوں سے گونج اٹھا. ایک موقع پرلطیف کھوسہ نے کہا کہ سپریم کورٹ کے اس فیصلہ کی وجہ سے سب کہتے ہیں کہ یہ فیصلہ تبدیل نہیں ہو سکتا،جس پر فاضل چیف جسٹس نے ازراءتفنن کہا کہ کیا کسی جج نے یہ بات آپ کے کان میں کہی ہے یا کسی کیفے ٹیریا میں ملا تھا؟ جس پر ایک بار پھر قہقہہ بلند ہوا۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں