ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن کی درخواست مسترد،وفاقی حکومت کی کلیئرنس ضروری قرار
election commission government pml n

الیکشن کمیشن نے ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن کی درخواست مستردکر دی،تفصیلات کے مطابق چیف الیکشن کمشنر نے رجسٹریشن سے متعلق درخواست پر محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے کہا ہے کہ وزارت داخلہ کے اعتراضات سنجیدہ نوعیت کے ہیں

پہلے وزارت داخلہ کے اعتراضات کے دور کئے جائیں ، ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن کیلئے وفاقی حکومت کی کلیئرنس ضروری ہے ،حکومت کی کلیئرنس کے بغیرملی مسلم لیگ رجسٹرڈنہیں کرسکتے۔درخواست کی سماعت چیف الیکشن کمشنر سردار رضا حیات کی سربراہی میں 4 رکنی بنچ نے کی، ملی مسلم لیگ کی جانب سے راجہ عبدالرحمان ایڈووکیٹ الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے، دوران سماعت چیف الیکشن کمشنر نے استفسار کیا کہ کیا آپ کی جماعت سے متعلق وزارت داخلہ کا خط آپ کے علم میں ہے،آپ خود کو وزارت داخلہ سے کلیئر کیوں نہیں کرا لیتے۔اس پر ملی مسلم لیگ کے وکیل راجہ عبدالرحمان نے کہا کہ خط میں کہا گیاکہ اس جماعت کی رجسٹریشن سے سیاست میں تشدد کا عنصر آسکتا ہے، ہمیں وزارت داخلہ کے خط میں استعمال کی گئی زبان پر اعتراض ہے۔چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ آپ وزارت داخلہ کے خط کو چیلنج کرسکتے ہیں۔وکیل ملی مسلم لیگ نے کہا کہ کیا الیکشن کمیشن وزارت داخلہ کی سفارش پر عملدرآمد کرنے کا پابند ہے،کیا اب ہر سیاسی جماعت کو وزارت داخلہ سے کلیئرنس لینا ہوگی، وزارت داخلہ نے شواہد کے بغیر ایک جواب دے دیاہے، الیکشن کمیشن قانون کے مطابق ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن پر فیصلہ کرے۔چیف الیکشن کمیشن نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ہماری تو اپنی کوئی اطلاع نہیں ہوتی،حکومت کی ہی مدد لے سکتے ہیںملی مسلم لیگ کے وکیل راجہ عبدالرحمان کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن جماعت کی رجسٹریشن کیلئے وزارت سے رائے لینے کاپابند نہیں،ہمارے کسی پارٹی عہدیدارکاکالعدم تنظیم سے تعلق نہیں،ہم نے سیاسی جماعت کی رجسٹریشن کے تمام قانونی تقاضے پورے کئے ہیں۔چیف الیکشن کمشنر نےدلائل سننے کے بعد محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے درخواست مسترد کر دی چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ  ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن کیلئے وفاقی حکومت کی کلیئرنس ضروری ہے ،حکومت کی کلیئرنس کے بغیرملی مسلم لیگ رجسٹرڈنہیں کرسکتے۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں