وزیراعظم نے ڈان لیکس کمیٹی کی متفقہ سفارشات کی منظوری دیدی، وزارت داخلہ نے اعلامیہ بھی جاری کر دیا
dawn leaks accpet prime minister

وزیراعظم نواز شریف نے ڈان لیکس کی کمیٹی کی متفقہ سفارشات کی منظوری دیدی ہے اور وزارت داخلہ نے اعلامیہ بھی جاری کر دیا جس میں سابق وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید، راﺅ تحسین اور طارق فاطمی کے خلاف کارروائی کے فیصلے کی توثیق کی گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم نے 29 اپریل کو ڈان لیکس کی کمیٹی کی سفارشات کی منظوری دی اور وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید کو پہلے سے ہی عہدے سے الگ کر دیا گیا تھا۔ اعلامیہ میں پرویز رشید، راﺅ تحسین اور طارق فاطمی کے خلاف کارروائی کے فیصلے کی توثیق کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ کمیٹی اس بات پر متفق تھی کہ راﺅ تحسین اپنی ذمہ داریاں سرانجام دینے میں ناکام رہے۔ اعلامیے کے مطابق کمیٹی نے ڈان اخبار، ایڈیٹر اور رپورٹر کا معاملہ آل پاکستان نیوز پیپر سوسائٹی (اے پی این ایس) کے سپرد کرتے ہوئے اخبار، ایڈیٹر اور رپورٹر کے خلاف انضباطی کارروائی کرنے کی ہدایت کی ہے۔ ذرائع کے مطابق اعلامیہ میں سیکیورٹی معاملات پر پرنٹ میڈیا کا ضابطہ اخلاق بنانے پر بھی زور دیا گیا ہے۔ سینئر صحافی اور تجزیہ نگار حبیب اکرم نے ن گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم کے دفتر سے اس سے پہلے جاری ہونے والے کاغذ میں بھی یہ کہا گیا تھا کہ وزیراعظم نے اصولی طور پر ان تمام سفارشات کی منظور ی دیدی ہے۔ جب یہ معاملہ ہوا تو اس دن بھی وزیر داخلہ کراچی میں تھے جن کا کہنا تھا کہ اس کا کچھ حصہ آگے آنا ہے جسے وزارت داخلہ نے جاری کرنا ہے اور آج وہی حصہ جاری کیا گیا ہے۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں