ڈاکٹروں نے جواب دے دیا تو دو بھائیوں نے مل کر خود ہی اپنے باپ کی شوگر کا علاج کردیا، بظاہر ناقابل علاج بیماری سے چھٹکارا پانے کیلئے کیا طریقہ اپنایا؟ جان کر آپ بھی باآسانی آزماسکتے ہیں
  • 0
  • 1

http://tuition.com.pk
sugar treatment

 شوگر جیسے مہلک مرض سے چھٹکارہ پانا اگرچہ بہت مشکل ہے مگر خاندان کے افراد مریض کا بھرپور ساتھ دیں تویہ مشکل آسانی میں تبدیل ہو سکتی ہے۔

ایسے ہی برطانیہ میں ایک شخص شوگر کا مریض تھا اور قریب تھا کہ وہ موت کے منہ میں چلا جائے، کیونکہ ڈاکٹروں کی طرف سے اسے جواب دے دیا گیا تھا مگر پھر اس کے بیٹے آئے اور کچھ ایسا کیا کہ اسے پھر سے جوان بنا دیا۔ آپ بھی یہ کہانی پڑھیے اور اگر آپ کے عزیزوں میں سے کوئی شوگر کا مریض ہے تو اسے اس مرض سے نجات دلانے کے لیے ایسا ہی کیجیے۔  62سالہ جیاف گزشتہ 10سال سے شوگر کا مریض تھا اور اس کی شوگر دوسرے درجے میں پہنچ چکی تھی۔ خطرناک شوگر کی وجہ سے اس کا ایک پاﺅں کاٹنے کا امکان بہت زیادہ ہو چکا تھا مگر پھر ایک روز اس کے بیٹے انتھونی اور آیان 10روز کی چھٹیاں لے کر اس کے پاس آئے اور اسے ایک پرفضاءمقام پر لے گئے۔ انتھونی اور آیان ایک خاص مقصد کے تحت یہ سب کر رہے تھے۔ وہ اپنے ساتھ پرانی خاندانی تصاویر بھی ساتھ لائے تھے۔ اگلے روز انہوں نے اپنے والد کے سامنے میز پر وہ تصاویر بکھیر دیں اور اسے ان دنوں کی یاد دلائی جب وہ مکمل صحت مند اور سلم سمارٹ ہوتا تھا۔ اب اس کا وزن 127کلوگرام تک پہنچ چکا تھا۔ دونوں بیٹوں نے اسے احساس دلایا کہ اگر وہ اپنی خوراک اور صحت پر توجہ مرکوز کرے تو وہ مزید 20سے 30سال تک اس کی شفقت کے سائے میں رہ سکتے ہیں اور وہ اپنے پوتوں پوتیوں کو بھی جوان ہوتے دیکھ سکتا ہے۔ان دس دنوں میں وہ دونوں اپنے والدکو سوچنے پر مجبور کرنے میں کامیاب ہو گئے کہ اس کی زندگی اب بھی کتنی اہمیت رکھتی ہے، چنانچہ اس نے اپنی صحت کا بھرپور خیال رکھنے کا عہد کر لیا۔

رپورٹ کے مطابق انتھونی اور آیان نے گھر میں موجود فیملی ممبرز کو بھی اپنے والد کی خوراک اور ورزش کے متعلق ہدایات دیں۔ خاندان نے 8ہفتے کے لیے جیاف کی روزانہ کی خوراک 800کیلوریز تک محدود کر دی۔ اس خوراک کا سب سے اہم پہلو یہ تھا کہ پاستہ اور بریڈ وغیرہ ممنوع قرار دے دیں، اور کاربوہائیڈریٹ کی حامل دیگر اشیائے خورونوش، مثلاً چاول اور گندم کے آٹے سے تیار کردہ اشیائ، سے بھی روک دیا،ساتھ ہی جیاف کو باقاعدگی سے ورزش کرنے کا بھی پابند بنا دیا گیا۔ ان تمام اقدامات کا حیران کن نتیجہ سامنے آیا اور محض 8ہفتوں میں اس کا وزن کم ہو کر صرف 82کلوگرام رہ گیااور اس کی شوگر کا لیول بھی اس قدر نیچے آ گیا کہ اسے مزید ادویات کھانے کی ضرورت نہ رہی۔ یوں جیاف اپنے بیٹوں اور خاندان کے دیگر افراد کی بھرپور توجہ اور نگہداشت کی بدولت پہلے کی طرح صحت مند اور چاک و چوبند زندگی گزارنے لگا۔

 

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں