یہ خبر پڑھ کر تمام خواتین کو اپنی ساسیں اچھی لگنے لگیں گی
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
likes news mother in law criminal

اکثر خواتین ساس کے ظلم کا شکوہ کرتی نظر آتی ہیں لیکن اگر انہیں روسی ساس تاتیانہ کدینووا کی بہو دشمنی کا علم ہوجائے تو یقیناً یہ خواتین اپنی ’ظالم‘ ساس کو ’فرشتہ‘ سمجھنا شروع کردیں گی۔ پچاس سالہ تاتیانہ کی بہو 30 سالہ روکسانہ ذرا زیادہ ہی خوش مزاج واقع ہوئی تھیں اور اکثر اپنی ساس کو کنجوس کہہ کر مذاق کا نشانہ بناتی تھیں۔

بڑی بی اپنی بہو کے مذاق پر رفتہ رفتہ غصہ جمع کرتی رہی اور بالآخر اس نے بہو کو کرائے کے قتل کے ہاتھوں مروانے کا منصوبہ بنالیا۔ تاتیانہ نے اپنے بیٹے کا گھر اجاڑنے کیلئے ایک مقامی گینگ سے رابطہ کیا اور 1200 پاﺅنڈ (تقریباً دو لاکھ پاکستانی روپے) میں اپنی بہو کو مروانے کی خواہش کا اظہار کیا۔ سنگدل ساس کی بدقسمتی تھی کہ پولیس کو اس کی نیت کی خبر ہوگئی اور ایک پولیس افسر نے بدمعاش کا روپ دھار کر خاتون کو خدمات فراہم کرنے کیلئے رابطہ کرلیا۔ خاتون نے بتایا کہ اسے اس بات سے غرض نہیں کہ روکسانہ کیسے مرے گی بس وہ اسے مردہ چاہتی ہے۔ اس نے اس مقصد کیلئے نصف رقم بطور ایڈوانس بھی جمع کروادی۔ پولیس نے خاتون کو رنگے ہاتھوں پکڑنے کیلئے اسے بلا کر اس کی بہو کی موت کی نقلی تصاویر دکھائیں اور جب اس نے باقی رقم ادا کی تو اسے گرفتار کرلیا گیا۔ عدالت نے خونی ساس کو 9 سال قید کی سزا سنادی ہے۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں