چار احمق
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
king story stupid

ایک مرتبہ شہنشاہ بڑے خوش مزاج میں تھا۔ اسنے بیربل سے کہا کہ :۔ ” بیربل ! مجھے چار احمق دکھاؤ۔ ہر احمق دوسرے سے بڑا ہو۔ “ بیر بل نے جواب دیا کہ :۔ بالکل ٹھیک ہے اس نے ایک آدمی کو دیکھا جو کہ ایک پلیٹ (مزے) اٹھائے ہوئے تھا۔ جو کہ کپڑے سے ڈھانپی ہوئی تھی۔ یا اس کے اوپر کپڑا دیا ہوا تھا۔

وہ اس قدر تیز چل رہا تھا کہ وہ جلدی میں نظر آتا تھا ۔ بیر بل نے اس سے پوچھا کہ :۔ ” ٹرے میں ک یا ہے اور تم کہاں اتنی جلدی میں جا رہے ہو ؟“ مگر اس آدمی نے چلنا جاری رکھا بیر بل نے اپنا سوال دہرایا تو آدمی نے کہا کہ :۔ ” جناب میری بیوی نے مجھے طلاق دے دی ہے اور کسی دوسرے آدمی سے شادی کر لی ہے دو سال قبل۔ گزشتہ شال اس کے ہاں ایک بچہ پیدا ہوا۔ تو آج اس بچے کی سالگرہ ہے۔ اس لیے میں اس ٹرے میں اس تہوار کے لیے مٹھائی لے کر جا رہا ہوں۔ “ بیر بل نے خود سے خیال کیا کہ :۔ ” مجھے پہلا احمق مل گیا ہے ۔“ آگے چلا تو بیر بل نے ایک آدمی گھوڑا پر سوا دیکھا آدمی نے اپنے سر پر لکڑیوں کا گٹھا رکھے ہوئے تھا۔ بیر بل اس کی حماقت کو دیکھ کر حیران ہوا اور اس نے کہا کہ :۔ ” یہ کیا ہے ؟“ آدمی نے کہا کہ :۔ ” جناب ! یہ میری پالتو گھوڑی ہے ۔ وہ پہلے ہی مجھے اٹھائے ہوئے ہے اور اس کو زیادہ وزن سے بچانے کے لیے میں اس لکڑیوں کے گھٹے کو اپنے سر پر اٹھائے ہوئے ہوں۔ “ بیر بل نے اس کو بھی اپنے ساتھ لے لیا۔ پھر وہ تینوں شاہی دربار میں گئے وہاں بیر بل نے شہنشاہ سے کہا کہ :۔ ” عالی جاہ ! یہ دو احمق ہیں۔ “ شہنشاہ نے فرمایا کہ ©:۔ ” ٹھیک ہے مگر دوسرے دو کہاں ہیں ؟“ بیر بل نے عرض کیا کہ :۔ ” وہ پہلے ہی یہاں موجود ہیں ۔“ شہنشاہ نے وضاحت کے لیے پوچھا۔ ” عالی جاہ ! یہ بڑا آسان کام ہے۔ کیا یہ بیوقوفانہ کام نہیں ہے میرے وقت کا ضائع کرنا صرف احمقوں کی تلاش میں ۔ لہذا تیسر ااحمق میں خود ہوں اور چوتھا احمق ۔“ شہنشاہ نے تجسس سے پوچھا۔ تو بیر بل نے کہا کہ :۔ ” عالی جاہ ! مجھے ڈر ہے کہ اگر میں کہوں کہ آپ چوتھے احمق ہیں کیونکہ یہ آپ ہیں کہ جس نے حکم دیا کہ میں احمقوں کی تلاش میں جاؤں۔ “

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں