بیماریوں کا علاج کرنے والی غاریں
  • 15
  • 50

http://tuition.com.pk
diseases cave treatment

آپ نے انسانی جسم میں درد کا علاج گولیوں میں تو دیکھا ہوگا لیکن یورپ میں ایسی غار یں ہیں کہ جہاں جانے سے لوگوںکے پٹھوں یا جوڑوں کی درد ختم یا کم ہوجاتی ہے۔یورپ کے ملک آسٹریامیں واقع ان غاروں میں لوگ ہر سال اپنی بیماریوں کے علاج کے لئے آتے ہیں،صرف سال گذشتہ میں 75ہزار لوگوں نے ان غاروں کا رخ کیا۔

یہاں پر کی جانے والی تھراپی کو آسٹریا اور جرمنی میں قبول کیا جاتا ہے اور لوگوں کو یہاں علاج کروانے پر انشورنس کی سہولت بھی دی جاتی ہے۔ ان کی دریافت کی کہانی بھی بہت دلچسپ ہے۔1940ءکی دہائی میں کچھ لوگ سونے کی تلاش میں ان غار وںکی طرف گئے تھے لیکن یہاں پہنچ کر ان کی صحت کی خرابیاں اور مختلف قسم کے درد ٹھیک ہوگئے۔یونیورسٹی آف انزبرک کا کہنا ہے کہ یہاں شفایابی کی وجہ غاروںکا ماحول ہے جہاں درجہ حرارت 41ڈگری اور نمی بہت زیادہ ہے جس کی وجہ سے ایک گیس radon بنتی ہے۔کچھ ڈاکٹرز اس طریقہ علاج سے زیادہ متفق نہیں اور ان کا خیال ہے کہ اگر گیس کو زیادہ مقدار میں انسان کو دے دیا جائے تو یہ پھیپھڑوں کے لئے انتہائی نقصان دہ ہے۔لندن کے ایک ماہر ڈاکٹر حسن طاہر کاکہنا ہے کہ لوگ چاہیں تو اپنے علاج کے دوران اس طریقے کو اضافی آپشن کے طور پر آزما سکتے ہیں لیکن radon کی زائد مقدار کہیں کوئی دوسرا نقصان ہی نہ پہنچا دے۔
آسٹریا کے ماہرین کا کہنا ہے کہ ان غاروں میں پائی جانے والی گیس کی مقدار بالکل محفوظ ہے اور فکر کی کوئی بات نہیں۔ڈاکٹر لیانا ویبر جو کہ ایک دہائی سے اس غار میں پیشہ ورانہ خدمات سر انجام دت رہی ہیں کا کہنا ہے کہ یہ گیس ڈی این اے کی کارکردگی کو بہتر بنانے کے ساتھ ہمارے مدافعتی نظام کو مضبوط بناتی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ آج تک انہوں نے غار میں کوئی منفی رد عمل نہیں دیکھا۔ Radonکی کم مقدار سے طریقہ علاج کو سائنسی زبان میں hormesisکہا جاتا ہے۔2001ءمیں ماسٹریکٹ یونیورسٹی کی تحقیق میں جوڑوں اور پٹھوں کے درد میں مبتلا ایک گروہ کا علاج ان غاروں میں لے جاکر اور فزیوتھراپی کے ذریعے کیا گیا جبکہ دوسرے گروہ کا علاج روایتی طریقوں سے کیا گیا ۔تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ غاروں میں کیا جانے والا علاج زیادہ فائدہ مند اور مفید تھا جبکہ مریضوں کے درد میں کمی دیکھی گئی۔دیگر تحقیقات میں بھی ایسے ہی نتیجے دیکھنے کو ملے ۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں