اگر آپ بھی ہومیوپیتھک ڈاکٹر سے اپنا علاج کرواتے ہیں تو یہ خبر ضرور پڑھ لیں، جدید تحقیق میں ایسا انکشاف کہ دنیا میں ہنگامہ برپاہو گیا
  • 2
  • 1

http://tuition.com.pk
homeopathic treatment

اگر آپ بھی ہومیوپیتھک ڈاکٹر سے اپنا علاج کرواتے ہیں تو یہ خبر ضرور پڑھ لیں، جدید تحقیق میں ایسا انکشاف کہ دنیا میں ہنگامہ برپاہو گیا

ہومیوپیتھک طریقہ علاج پر یقین رکھنے والوں کے لیے بہت بری خبر ہے کہ آسٹریلیا کے سائنسدانوں نے ایک طویل تحقیق کے بعد ثابت کر دیا ہے کہ اس طریقہ علاج کا بالکل کوئی فائدہ نہیں ہے۔
یہ تحقیق بانڈ یونیورسٹی(Bond University) اور نیشنل ہیلتھ اینڈ میڈیکل ریسرچ کونسل کے سائنسدانوں نے مشترکہ طور پر کی ہے جس میں انہوں نے 68امراض اور مختلف طریقہ ہائے علاج پر کی جانے والی 176تحقیقات کے نتائج کا تجزیہ کیا ہے۔ان تمام تحقیقات کے نتائج پر 57بار ترتیب وار نظرثانی کی گئی جس سے ثابت ہوا کہ ان 68میں سے کسی بھی مرض کے لیے ہومیوپیتھک طریقہئ علاج موثر نہیں اور ان امراض کے مریضوں پر ہومیوپیتھک دوائیوں نے کوئی اثر نہیں کیا۔  تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر پاؤل گلازیو کا کہنا تھا کہ ”ہومیوپیتھی ایک متبادل طریقہ علاج ہے جس کی بنیاد ایک مادے کو پانی میں حل کرکے ادویات بنانے پر رکھی گئی ہے۔ہومیوپیتھک دوائیوں میں یہ مادے اتنی بار پانی میں حل کیے جاتے ہیں کہ بالآخر وہ اپنی تاثیر کھو دیتے ہیں بلکہ ان میں مادے کی اصلیت ہی باقی نہیں رہتی اور یہ ڈمی ایلوپیتھک دوائیوں سے بھی کم تر ہو جاتے ہیں۔“ ڈاکٹر پاؤل نے مزید کہا کہ ”ہم نے 68امراض پر ہومیوپیتھک طریقہ علاج کو آزمایا ہے اور کسی ایک مرض کے لیے بھی اسے موثر نہیں پایا۔ ہومیو پیتھک دواؤں کے اس قدر تجربات کرنے کے بعد جب صفر نتائج سامنے آئے تو ہم اس سے مایوس ہو گئے۔ہم اچھی طرح سمجھ سکتے ہیں کہ ہومیوپیتھک طریقہ علاج کے بانی سیموئیل ہینمین (Samuel Hahnemann) نے 18صدی عیسوی کے ایلوپیتھک طریقہ علاج سے فرار اختیار کیوں کیا، جس کے تحت مریضوں کا خون نکال کر ان کا علاج کیا جاتا تھا، اور انہوں نے اس کا ایک متبادل طریقہ علاج کیوں دریافت کیا۔لیکن ہمارے خیال میں وہ ہومیوپیتھک طریقہ علاج کی مجموعی ناکامی سے مایوس ہوا ہو گا۔“

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں